Home > General, Islam, Pakistan, Politics > Fact or fiction? Bhutto, General Zia and United Nation – by Azeem M. Mian

Fact or fiction? Bhutto, General Zia and United Nation – by Azeem M. Mian

Did Zulfikar Ali Bhutto tear down an important resolution by Poland which could have helped in a (relatively) honourable resolution of Pakistan-India war in 1971?

Is General Zia-ul-Haq the first world leader in the history of UN whose speech in General Assembly was preceded by recitation of the Quran?

The following article by Azeem M. Mian (published in Jang 29 June 2012) separates fact from fiction.

ذوالفقار علي بھٹو مرحوم اور ضياء الحق مرحوم دونوں اپنے اقتدار کے ايام ميں اقوام متحدہ کے ہيڈ کوارٹرز نيويارک آئے دونوں کي آمد اور کارروائي کا ريکارڈ اقوام متحدہ ميں موجود ہے ليکن اس کے باوجود اقوام متحدہ کے حوالے سے دونوں ہي کے بارے ميں دو واقعات آج بھي پاکستان ميں زبان زد عام ہيں جب کہ ان دونوں واقعات کي حقيقت اس سے بہت مختلف ہے جو مشہور کيا گيا دونوں واقعات پاکستان کي سياست اور تاريخ کا حصہ ہيں مگر آج تک اقتدار کي ضرورت کو پورا کرنے کيلئے جان بوجھ کر مسخ کئے گئے اور حقائق کو درست نہيں کيا گيا

ايک بات ذوالفقارعلي بھٹو مرحوم کے بارے ميں مشہور ہے کہ جب مشرقي پاکستان بحران اور بھارتي حملے کے ہاتھوں بنگلہ ديش ميں تبديل ہورہا تھا اور بھارتي فوجيں بنگلہ ديشي مکتي باہني کے تعاون سے پاکستاني فوج کے گھيراؤ اور قبضہ کا عمل جاري رکھے ہوئے تھيں تو بھٹو مرحوم يحيي? حکومت کے وزير اور نمائندہ کے طور پر اقوام متحدہ کي سلامتي کونسل کي کارروائي ميں شريک تھے اور سلامتي کونسل مشرقي پاکستان پر بھارتي حملے سے پيدا شدہ صورت حال پر غور کررہي تھي تو کہنے والوں کا کہنا ہے کہ پولينڈ نے ايک مسودہ قرارداد پيش کيا جو سقوط مشرقي پاکستان کے بجائے پاک، بھارت جنگ بند کرکے مشرقي پاکستان کے مسئلے کا حل تلاش کرنے کي تجويز لئے ہوئے تھا ليکن بھٹو مرحوم نے سلامتي کونسل ميں جوشيلي تقرير کرتے ہوئے وہ مسودہ قرارداد پھاڑ ديا اور احتجاجاً سلامتي کونسل سے واک آؤٹ کيا? جس کے بعد امن اور سياسي حل کي بات آگے نہ بڑھ سکي پاکستان ٹوٹ گيا? 90 ہزار پاکستاني فوجي ہتھيار ڈال کر بھارتي قيد ميں چلے گئے اور پولينڈ کي قرارداد کا مسودہ پھاڑ نے والے بھٹو مرحوم تنقيد و مخالفت کا نشانہ بنے

گزشتہ 35 سالوں سے صحافتي ذمہ داريوں کے سلسلے ميں اقوام متحدہ کي يہ عمارت، جنرل اسمبلي، سلامتي کونسل اور يہاں کے ماحول سے ميري آنکھيں بہت مانوس ہوچکي ہيں اور اقوام متحدہ کے نظام اور ريکارڈ سے واقفيت بھي بڑي حد تک ہے? اگر کوئي رکن ملک باقاعدہ کوئي تحريري مسودہ قرارداد، بيان يا موقف پيش کرتا ہے تو وہ اقوام متحدہ کے ريکارڈ کا حصہ ہوجاتا ہے? خواہ وہ مسودہ بعد ميں واپس لے ليا جائے يا اس ميں ترميم يا تنسيخ کي جائے وہ پہلا مسودہ بھي ريکارڈ ميں موجود ہي رہتا ہے? ميں نے اقوام متحدہ کا ريکارڈ بڑي تفصيل سے ديکھا اور مشرقي پاکستان کے حوالے سے پولينڈ کي قرارداد کو تلاش کرنے کي بھرپور کوشش کي مگر آج تک سلامتي کونسل کے ريکارڈ سے 1971ء ميں پولينڈ کي قرارداد کا مسودہ نہيں ملا? اب تو انٹرنيٹ اور کمپيوٹر نے ريکارڈ اور دستاويزات کي دنيا کو ہر ايک کي دسترس ميں دے ديا ہے? آپ بھي اقوام متحدہ کے ريکارڈ ميں پولينڈ کي اُس تاريخي قرارداد کا مسودہ تلاش کريں جو مشرقي پاکستان ميں پاک بھارت جنگ کو روک کر مسئلے کا حل پيش کررہا تھا اور بھٹو مرحوم نے اُسے پھاڑ کر احتجاجي واک آؤٹ کرکے ختم کرڈالا

اب آيئے اُس حقيقت کي طرف جو اس واقعے کے چشم ديد گواہ اور سينئر پاکستاني صحافي اے پي پي کے افتخار علي چوہدري بتاتے ہيں افتخار علي اُس وقت سرکاري نيوز ايجنسي اے پي پي کي جانب سے اقوام متحدہ ميں تعينات تھے اُن کا کہنا ہے کہ بھٹو مرحوم نے سلامتي کونسل ميں جو کاغذات پھاڑے تھے وہ اُن کي اپني تقرير کے نوٹس تھے کيوں کہ جب وہ سلامتي کونسل سے احتجاجاً واک آؤٹ کرکے نکلے تو افتخار علي صاحب نے مرحوم بھٹو سے کہا کہ اُن کي تقرير کا مسودہ مل جائے تو وہ اس کي خبر بناکر بھيج ديں جواب ميں بھٹو مرحوم نے کہا کہ انہوں نے تقرير لکھنے کي بجائے ہاتھ سے نوٹس لکھے ہوئے تھے اور وہ انہوں نے سلامتي کونسل کے ہال ميں پھاڑ کر پھينک ديئے اس پر افتخار علي نے سلامتي کونسل کے ہال ميں جاکر وہ پھاڑے گئے نوٹس کے ٹکڑے اٹھائے اور انہيں جوڑ کر پڑھا اور خبر بنا کر بھيجي اگر افتخار علي صاحب کو پتہ ہوتا کہ يہ نوٹس پاکستان تک پہنچتے پہنچتے پولينڈ کي قرارداد کا روپ دھارليں گے تو وہ بھٹو مرحوم کے تحرير کردہ نوٹس محفوظ کرليتے? افتخار علي صاحب آج بھي نيويارک ميں رہتے ہيں اور آج بھي اُن کا موقف يہي ہے جو وہ ميرے علاوہ اپنے ديگر دوستوں کو بھي بتاچکے ہيں? دراصل يحيي? خان کي فوجي حکومت پاکستان کي شکست کي ذمہ داري خود لينے کي بجائے سويلين ذوالفقار علي بھٹو پر بھي کچھ الزام رکھنے کے لئے پولينڈ کي قرارداد کا شاخسانہ لے آئي تھي? اقوام متحدہ کے ريکارڈ ميں تو آج بھي تلاش کريں تو نہيں ملتي حالانکہ اقوام متحدہ ہر تجويز، مسودہ قرارداد کو نمبر بھي الاٹ کرتي ہے تاکہ گمشدگي نہ ہو اور تلاش ميں آساني ہو

کوئي بتلائے کہ ہم بتلائيں کيا؟

********

ايک اور تاريخي اور غلط طور پر مشہور واقعہ مرحوم ضياء الحق کے دورہ? اقوام متحدہ کا ہے جس کا عيني شاہد ميں بھي ہوں جب ضياء الحق مرحوم مسلم دنيا  کي نمائندگي کے ساتھ اقوام متحدہ آئے تو انہوں نے اقوام متحدہ کي تاريخ ميں پہلي بار قرآن کريم کي تلاوت کرائي اور پھر اقوام متحدہ کي جنرل اسمبلي سے انہوں نے خطاب کيا? پاکستان کے عوام نے بھي پاکستان ٹيلي ويژن پر اينکرپرسن کے اعلان کے ساتھ ہي يہ منظر ديکھا کہ اقوام متحدہ کے پروٹوکول کا اعلان ہوا کہ صدر پاکستان ضياء الحق خطاب کريں گے اور ضياء الحق جنرل اسمبلي کے اسٹيج پر کرسي سے اٹھ کر ڈائس پرآئے اور خاموش کھڑے ہوگئے پاکستاني عوام نے پي ٹي وي کے ذريعے تلاوت قرآن سني اور تلاوت کے ختم ہوتے ہي ضياء الحق نے نحمدہ ونصلي کہہ کر اپني تقرير کا آغاز کيا? پاکستان کے عوام اور مسلم ممالک کے عوام خوش تھے کہ اقوام متحدہ کے ايوان ميں ضياء الحق مرحوم نے تلاوت قرآن کي آواز سنوائي پاکستان ميں مرحوم ضياء الحق کو اس حوالے سے بڑي مقبوليت حاصل ہوئي جس کي انہيں ذوالفقار علي بھٹو کو موت کي سزا دينے کے بعد بڑي ضرورت تھي? آج بھي بعض لوگ اس حوالے سے ضياء الحق مرحوم کو خراج عقيدت پيش کرتے ہيں? اب آيئے اصل حقائق کي جانب جو اقوام متحدہ کي جنرل اسمبلي ميں پيش آئے اور اقوام متحدہ کے حکام نے کيا موقف اور کيوں اختيار کيا تھا? دراصل پاکستان سے چلتے وقت مرحوم ضياء الحق يہ کہہ کر آئے تھے کہ وہ اقوام متحدہ کي تاريخ ميں پہلي بار تلاوت کرائيں گے اور پھر خطاب کريں گے? وہ اپنے ساتھ ايک قاري صاحب کو بھي لائے تھے ليکن اقوام متحدہ کے حکام نے تلاوت کے بارے ميں يہ موقف اختيار کيا کہ اقوام متحدہ ايک سياسي، سيکولر عالمي ادارہ ہے اگر قرآن کي تلاوت کے لئے قاري صاحب کو اجازت دي گئي تو پھرعيسائي، يہودي، ہندو، بدھ اور ديگر مذاہب کے ماننے والے بھي اپني اپني مذہبي کتابوں اور تعليمات کو اقوام متحدہ کے ڈائس اور پليٹ فارم سے پرچار کا مطالبہ کريں گے ہر تقرير سے پہلے ڈائس پر کسي مذہب کا رہنما کھڑا ملے گا لہ?ذا اس کي اجازت نہيں دي جاسکتي? اقوام متحدہ کے حکام نے يہ اشارہ بھي ديا کہ مرحوم ضياء الحق اپني تقرير کا آغاز جس طرح چاہيں کرليں يعني اگر وہ خود ڈائس پر آکر تلاوت کرکے اپنے خطاب کا آغاز کرليں تو يہ اُن کي تقرير کا حصہ ہوگا اور تلاوت بھي ہوجائے گي مگر ضياء الحق کے مشيران مصر تھے کہ قاري صاحب کي تلاوت ہوگي معاملہ اقوام متحدہ کے سيکريٹري جنرل تک پہنچا تو اُن کا موقف بھي وہي رہا لہ?ذا کسي ذہين پاکستاني مشير نے يہ حل نکالا کہ جنرل اسمبلي کي بالائي منزل پر ٹي وي، ريڈيو براہ راست نشريات اور کوريج کے لئے بنائے گئے ايک بوتھ ميں قاري صاحب کو لے جاکر وہاں سے پاکستاني ٹي وي کي براہ راست نشريات ميں تلاوت سنوادي جائے اور مرحوم ضياء الحق ڈائس پر خاموش کھڑے رہيں وہاں لگائي گئي ايک بتي کے بجھنے کا انتظار خاموشي سے کريں اور بتي بجھتے ہي وہ اقوام متحدہ کي جنرل اسمبلي سے اپنا خطاب شروع کرديں? پاکستان ٹيلي ويژن کے ريکارڈ ميں سے ضياء الحق کے اس خطاب کي فلم نکلواکر ديکھا جاسکتا ہے کہ حقيقت ميں پاکستاني عوام کو وہ تلاوت سنائي گئي جو اقوام متحدہ کے ايک چھوٹے بوتھ سے پاکستان نشر ہوئي مگر اقوام متحدہ کے ايوانوں ميں يہ کسي نے نہيں سني? الله بھلا کرے کسي محمد اويس فاروقي کا جنہوں نے يہ پُراني ويڈيو پي ٹي وي کے اينکر پرسن کي آواز اور ضياء الحق کي اقوام متحدہ ميں موجودگي يوٹيوب پر ڈاؤن لوڈ کررکھي ہے

قارئين خود يہ ويڈيو ديکھيں اور خود سے سوال کريں? (1) تلاوت کي آواز ضرور مگر قاري صاحب ڈائس پر کيوں نہيں نظر آئے? (2) پروٹوکول کے اعلان کے ساتھ ضياء الحق مرحوم کرسي سے اٹھ کر ڈائس پر آکر تقرير کے آغاز کي بجائے خاموش کھڑے کيوں رہے؟ اور مائيک کے ساتھ لگي بتي کے بجھنے کا انتظار کيوں؟ اقوام متحدہ کے ہال ميں موجود سفارت کاروں اور سامعين کي کيا کيفيت ہے؟ مغربي ميڈيا ميں اس بارے ميں تو شور اٹھ جاتا مگر نہ کچھ چھپا نہ ہي کوئي حمايت يا مخالفت ميں شور اٹھا؟

يہ بھي درست نہيں کہ يہ مذکورہ تلاوت تاريخ کي ”پہلي“ تلاوت تھي? ايران ميں انقلابي خميني حکومت کے قيام کے بعد ايران کے وزير خارجہ نے اقوام متحدہ ميں اپني تقرير سے قبل خود مختصر تلاوت کرکے آغاز تقرير کيا تھا جو مرحوم ضياء الحق سے پہلے کا واقعہ ہے

حقائق تاريخ اور قوم کي امانت ہوتے ہيں

shareshare

SOURCE:    http://criticalppp.com

Visit me on facebook:  http://www.facebook.com/ameerahmadmirza

Follow me on twitter: https://twitter.com/ameermirza2
Advertisements
  1. No comments yet.
  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: